امریکہ نے گوانتا نامو بے جیل میں قید عبد المالک احمد عبد الوہاب کو مونٹے نیگرو منتقل کر دیا

واشنگٹن: پنٹاگون کے مطابق دہشت گردی کے الزام میں گوانتانامو جیل میں بند ایک قیدی کو مونٹے نیگرو منتقل کردیا ہے۔ واضح رہے کہ عبدالمالک احمد عبدلوہاب الرہابی نام کے اس قیدی کی منتقلی کے بعد اب بھی کیوبا کے اس بدنام زمانہ قید خانہ میں 79 قیدی باقی رہ گئے ہیں۔
اورگوانتانامو کے اس قید خانہ کی وجہ سے امریکہ کی کافی بدنامی ہوئی ہے۔ امریکہ نے افغانستان اور عراق پر حملے کرنے کے بعد وہاں لڑنے والے یا دہشت گردی کے شبہ میں پکڑے گئے متعدد لوگوں کو یہاں بند کردیا تھا۔ مگر اتنے سال گذرنے پر بھی بیشتر لوگوں پر الزامات عائد کرکے مقدمات نہیں چلائے گئے۔
اور انہیں قید رکھا گیا اور ایذائیں د ی گئیں۔ چونکہ امریکہ کی سرزمین پر کسی کو بھی بغیر قانونی چارہ جوئی کے لمبے عرصہ عرصہ تک جیل میں نہیں رکھا جاسکتا اس لئے ان لوگوں کو کیوبا میں واقع اس کے فوجی اڈے پر رکھا گیا تھا۔
صدر براک اوبامہ نے صدر بننے سے پہلے وعدہ کیا تھا کہ وہ اس قید خانہ کو بند کردیں گے مگر آٹھ سال کے اپنے دور اقتدار میں وہ ایسا نہیں کرپائے۔ البتہ کئی قیدیوں کو یہاں سے منتقل ضرور کیا گیا ہے۔ چند پر مقدمہ بھی چل رہا ہے اور وہ امریکہ کی جیلوں میں ہیں۔ (رائٹر)